www.onlinecasino.to

قرآن ہمارا دستور ہے

کیا ہم سب مجرم نہیں ؟؟ کے عنوان سے جناب انصارعباسی کا ایک کالم چند  روز پہلے روز نامہ جنگ میں  شا ئع ہوا . اپنے کالم میں وہ لکھتے ہیں کہ ” لاہور زیادتی کیس کے بعد سول سوسا یٹی کی طرف سے مطا لبہ سامنے آیا ہے . کہ مجرموں کو سر عام  پھانسی دے کر نشان عبرت بنایا جا ے .  ہمارا دین بھی ایسے جرائم کی یہی سزا تجویز کرتا ہے . درندہ صفت مجرموں کو سر عام ،بیچ چوک کے لٹکانا ، انہیں سنگسار کرنا اور کوڑ ے مارنا . یہ ہے ہماری شریعت کا حکم ……….
جناب انصار عباسی نے بات دین سے شروع کی اور ختم کرتے ہیں ہماری شریعت پر . جہاں تک دین اسلام کا تعلق  ہے . اس میں کوڑے مارنے کی سزا تو ہے . لیکن دین میں سنگسار کرنے کا کوئی حکم موجود نہیں .یہ سزا انکی شریعت میں ضرور موجود ہے . مولوی کی شریعت اور دین اسلام میں زمین آسمان کا فرق ہے . جس شریعت کا ذکر انھوں نے کیا ہے  وہ انسانوں کی لکھی اور بنائی ہوئی ہے . اس میں یونانیوں اور یہودیوں کے مذہب سے سزاؤں کو عربی زبان میں منتقل کر کے اسلام کا نام دے دیا گیا ہے ۔

 قرآن کریم  میں ارشاد ربانی ہے ۔

 زانی مرد اور زانیہ عورت میں سے ہر ایک کو سو ،سو  کوڑے لگا و . اگر تم الله اور  یوم آخرت پر ایمان رکھتے ہو .تو قانون خدا وندی کے نفاذ میں کسی قسم کی نرمی مت برتو .اور یہ سزا اس طرح دو کہ مومنین کی ایک جماعت وہاں موجود ہو .                       24/2

 النور قرآن کریم میں صرف یہی ایک مقام ہے .جہاں پر زنا کی سزا کا ذکر ہے .

 ابو داود میں روایت نمبر 1036. ایک یہودی مرد اور عورت کو زنا کے جرم میں سنگسار کرنے کا بیان ہے .  ہمارا استدلال بھی یہی ہے کہ رجم کی سزا انکے مذہب میں تھی . ابو داود باب رجم میں حضرت ابن عباس ؓسے ایک روایت ہے . کہ حضرت  عمر بن خطاب ؓنے خطبہ  دیا اور فرمایا کہ رسول الله نے رجم کیا اور ان کے  بعد ہم نے بھی رجم کیا اور اب مجھے اندیشہ ہے کہ لوگوں پر ایک مدت گزر   جا ے .اور کہنے والا یوں کہنے لگے کہ الله کی کتاب میں تو ہم رجم کا حکم نہیں پا تے . الله کی قسم اگر لوگ یہ نہ کہتے  کہ عمرؓ   نے الله کی کتاب میں اضافہ کر دیا ہے .تو میں اس آیت کو قرآن میں لکھ دیتا ( یعنی آیت رجم کو لکھ دیتا ).. جس نے بھی یہ  روایت گھڑ ی ہے . وہ یہ ثابت کرنا چا ہٹا  ہے کہ قرآن میں کچھ آیات شامل ہونے سے رہ گئ ہیں . اور قرآن کے بارے میں شک پیدا کرنا چا ہتا ہے .جبکہ الله کا فرمان ہے کہ ہم ہی نے یہ قرآن اتارا ہے اور ہم ہی اسکی حفاظت کرنے والے ہیں . اب یہ ہماری مرضی ہے کہ ہم الله کا  حکم مانتے ہیں یا نہیں .

 سورہ البقرہ آیت 2. 

  یہ ایسی کتاب ہے .جس میں کوئی شک نہیں . 

 ہمارا ایمان ہے کہ محمّد رسول الله نے کبھی بھی الله کے احکامات کی خلاف ورزی نہیں کی . انھوں نے ایسا نہ کیا نہ کہا . اور نہ ہی آپکے صحابہ نے ایسا کوئی کام کیا جس کی تعلیم آپ نے نہ دی ہو . اس کے لیے دلیل صرف اور صرف الله کی آخری کتاب قرآن کریم ہے . قرآن کریم میں الله کا فرمان ہے .

 اور اگر یہ پیغمبرہماری نسبت کوئی بات جھوٹ بنا لاتے تو ہم ان کا دا ہنا ہاتھ پکڑ لیتے پھر انکی رگ گردن کاٹ ڈالتے .پھر تم میں کوئی ہمیں اس سے روکنے والا نہ ہوتا .69/44.45.46.47. 

 اور جب ان کو ہماری آیتیں پڑھ کر سنا یٔ جاتی ہیں تو جن لوگوں کو ہم سے ملنے کی امید نہیں .وہ کہتے ہیں کہ یا تو اس کے سوا کوئی اور قرآن بنا لاؤ یا اس کو بدل دو .کہہ دو کہ مجھ کو اختیار نہیں ہے کہ اسے اپنی طرف سے بدل دوں .میں تو اسی حکم کا تا بع ہوں جو میری طرف و  حی آتی ہے . اگر میں اپنے پروردگار کی نافرمانی کروں تو مجھے بڑے سخت دن کے عذاب سے خوف آتا ہے  10/15. 

دین میں تمام فیصلے الله کی کتاب کے مطابق ہوتے ہیں . کیونکہ الله کا قرآن کریم میں ارشاد ہے .

اور جو لوگ الله کی کتاب کے مطابق فیصلے نہ کریں وہ فاسق ہیں . سورہ المائدہ آیت .47. 

 جو لوگ الله کے نازل کردہ احکامات کے مطابق فیصلے نہیں کرتے .ایسے ہی لوگ کافر ہیں . سورہ المائدہ آیت .44 

بخاری . باب  ایام الجا ایلہ : حضرت عمرو بن مہمون سے روایت ہے . کہ زمانہ جا ہلیت میں .میں نے ایک بندریا کودیکھا .جس نے زنا کا ارتکاب کیا .سب بندر اسکے گرد جمع ہو گے  اور اسے سنگسار کیا میں نے بھی انکے ساتھ پتھر مارے.

 یعنی الله کا حکم تو ہے کہ زنا کرنے والوں کو سو ،سو کوڑے لگاو. جبکہ روایت کہتی ہے کہ اگر شادی شدہ مرد اور عورت زنا کریں تو دونوں کو سنگسار کیا جاے . اسکی تائید میں اوپر بیان کردہ روایت پیش کی جاتی ہے . ہمیں سوچنا چا ہےکہ کیا جانور بھی زنا کرتے ہیں .اگر جانور زنا کرتے ہیں تو پھر شادی بھی ضرور کرتے ہونگے . کیا آپ نے کبھی کسی جانور ،خاص طور پر کسی بندر اور بندریا کی شادی ہوتے دیکھ ہے . اگر ہم نے جانوروں کو دیکھ کر انسانوں کے لیے قوانین بنانے ہیں . تو پھر مجھے یہ کہنے کی اجازت دیجیے کہ نظریہ ارتقا کے ما ننے والے درست کہتے ہیں .کہ ہم (انسان ) بندروں سے ارتقای منازل طے کرتے ہوے موجودہ شکل میں آے ہیں . لہذا جو قانون بندروں میں نافذ ہے . وہ ہی ہم پر بھی لاگو ہو گا .یعنی زنا کی سزا سنگسار ہو گی . 

 علامہ اقبال نے کیا خوب کہا ، 

   خود بدلتے نہیں قرآن کو بدل دیتے ہیں

 ہوے کس درجہ پیرا ن حرم بے تو فیق !

Fitness Through Salat

A complete physical mental and spiritual Health raising programme for you and your family members.

FITNESS THROUGH SALAT

Disease and inactivity are the world’s prime enemies of the young-old and the ageing. If the Government’s want to do something that will keep the cost of treatment and health care down in future and control the problems with their citizens, then they should look to the fitness through SALAT for the answer. Despite its protective effects and proven value there have been numerous barriers to the effective education about national health and fitness through SALAT. There are no National objectives or plans for promoting fitness and health in our country.

Quran lays extreme stress on the performance of Salat regularly and the Prophet of Islam (PBUH) institutionalized it during his life time. The purpose is to improve the quality of life through promotion and maintenance of the highest degree of physical, mental and spiritual well being of mankind i.e. to attain perfect fitness and prevention of departure’s from physical, mental, social and spiritual health.

We know that perfect fitness is the ability of the body, mind and spirit to operate at the highest level of capacity as long as we live. To attain this climax, Almighty Allah through his prophet Muhammad (PBUH) has sent us a gift, the gift of Salat i.e. the finest and the best exercise to obtain the optimum in physique mind and spirit. The ultimate aim of Salat and Jamat is to involve all muslim community to participate in an appropriate, natural, regular, physical, mental and spiritual activity in all age groups and sectors of community.

Precise full range of body movements, adaptation of certain postures, repetition of phrases, and communication in Salat are actually a regular systematic fitness program which is a must for the attainment of highest degree of capabilities of man.

The human frame work is dynamic ~ constantly adapting and adjusting to the forces imposed upon it from moment to moment. It is a structure made up of connected parts and subject to mechanical laws. Its muscles working in harmony and integrated unit operating with minimal strain under all conditions, it is the quality of these movements and interaction that determines structural health. Since the inception, during the development stages in the mother’s womb, birth, infancy, childhood, youth, maturity and old age, the human structure is subject to falls, blows, knocks, twists, strains stresses fatigue and poor postural conditions, gravity, injury, emotional tensions and extreme conditions of all kinds.

Due to the above conditions the wear and tear of life continues which causes structural imbalances. Almost the entire human structure depends on the sole and urgent purpose of breathing and circulation and ultimately the central nervous system (These imbalances affect and put strain on the heart postural defects compress the heart and may even displace it. The exaggerated spinal curves can put strain on the diaphragm on which the heart rests, and if shoulders and ribs have a tendency to droop, the diaphragm is lowered and so is the heart. The sunken chest puts pressure upon the lungs, respiratory system is badly influenced and supply of oxygen to heart and body is affected.

Structural imbalances influence the circulation of blood also, since most blood vessels lie beneath or are surrounded by muscles, over contraction – stiffness is bound to squeeze the vessels and make it more difficult for the heart, to pump the blood-deposit oxygen-pick up waste and return via the veins to the heart, which influences the chemical balance of the body as well.

In addition to the above, there are bacteria, germs and viruses which attack cells and tissues of the body the building blocks of the human structure – and ultimately cause ill health.

Human body contains an organism, machinery and quality necessary for the prevention of disease. The management of structural balance establishes normal conditions in the body so that healer and regulator could do its work.

We know by our experience that to enhance our ability we always adapt to some exercise, which enhances our ability, insight and knowledge to act and perform perfectly. Salat is a compulsory standardized system of physical, mental and spiritual exercise which promotes and helps to remove postural defects, rectifies exaggerated spinal curves, repairs heart and blood vessels and regulates the blood supply. The physical postures in Salat especially in ‘Rukoo’ and ‘Sajdah’ increase the capacity of the heart, lungs and blood vessels to supply oxygen and remove waste from muscles. Due to ‘Sajdah’ (Prostration) the chest cavity relaxes and opens up more and expands in all directions. The rib cage broadens and entire spine lengthens, heart and lungs have maximum room in which to function, and muscles involved in breathing are free, less resistance to circulation and ultimately to movement of the structure.

If Salat is performed regularly and correctly the breathing and circulatory system works harmoniously and gains the greatest benefit from the activity of Salat and the entire body starts functioning efficiently and its ability to ad just spontaneously is more harmonious and the healing power inside the body is strengthened. Salat also improves the posture – slows down ageing, makes life more enjoyable – encourages emotional balance. Improves physical ease and self confidence improves sleep and adds greater sense of relaxation.

Through SALAT the PROPHET(SAW) has translated into practical plan the promotion of physical activity for perfect fitness at different stages in life. The promotion of SALAT for its beneficial effects justifies regular performance. One thing that SALAT can do for us as we age, is enable us to prolong the state of independent living till the end, as it helps in the maintenance of stamina, suppleness and strength in addition to numerous, other benefits and BRAKAT.

Today’s young – middle aged or senior men or women who usually work in office for hours can substantially reduce the risk of death by heart attack – stroke – cancer – asthma – aids – mental disability – stress – depression and suicide by simply walking to the mosque for performance of SALAT and back five times a day. As the walking and performance of SALAT stimulates the immune system, healing power, blood circulation, breathing and nervous system – provides social contacts and enhances interest in life by removing stress – depression – persistent sadness or helplessness thoughts of death and suicide.

Before SALAT the Ablution WUZU works as a disinfectant and it checks and controls the infection. The average person touches his face within the area of the eyes nose and mouth about once every 30 minutes which causes the germs and viruses to spread unknowingly.

And when you are stressed out and depressed your body’s immune system is far more vulnerable to an invading virus. SALAT and WUZU reduce the stress in your life quickly and strengthen your immune system which reduces your susceptibility to cold and virus attacks and it also helps to keep your environment germ free.

The protective effect of SALAT persists at all ages and the evidence in now sufficiently persuasive that regular SALAT does have an independent protective action against coronary heart disease and many other lethal ailments. Your heart, a fist sized organ is a hollow muscular Chamber, which contracts spontaneously 70 times a minute, 100,000 times a day, 3 million times a month and pumps 5 liters of blood in a minute, when you are resting and upto six times more at maximum exertion, yet it never stops for rest. However, if the heart stops for two minutes, irrepairable damage is done to the delicate brain cells.

Like all other parts of the body, the heart muscle needs a blood supply of its own to give it food and oxygen. The blood vessels which supply the heart muscles with blood are called the coronary artries.

These artries (TWO ONLY) encircle the heart and branch to supply all its parts. The trouble with the coronary artries is that if they get blocked or become narrow the damage is serious, in many other parts of the body small artries can be shut off without much damage-other artries in the area enlarge and branch and supply the blood starved part, so all is well. But in the heart, every little branch of the coronary artries is important, the slightest blockage results in death of the parts of the heart muscle supplied by the branch. Heart muscle, unlike some other tissues in the body, once dead, cannot grow. Correct performance of SALAT clears blood vessels rapidly and keeps the blood supply unimpaired.

Your heart starts mal-functioning when one or more artries supplying blood to the heart become narrow or because of small blood clots in coronary artries which hamper the blood supply. Due to this the amount of blood getting through is severally restricted as such they cannot supply enough blood to the heart muscles. This may not matter while your heart is resting. But as soon as you exert, the extra oxygen needed by the heart simply cannot get their because the artries are so obstructed or narrow. This results in the heart being unable to pump efficiently and if there is complete blockage of coronary artries then the supply of the blood is stopped. Due to stoppage of blood, oxygen supply is disconnected and the nervous connections which keep the heart going are unable to work and ultimately the heart dies, this is called a heart attack death.

A stroke can be due to cloting of a blood vessel in the brain, this causes part of the brain not to work properly. High blood pressure is also a major contributory factor in both heart disease and stroke.

Narrowing of the blood vessels to the heart and brain, cloting of blood and high blood pressure is infact due to a defective life style (BAD HABITS) Physical inactivity, (regular disuse of large muscle groups and limbs to their maximum capacity for prolong periods) smoking (Recent studies have confirmed that cigarette smoke causes heart attacks). Not enough sleep (Lack of sleep effects your stress level – ability to concentrate – energy levels – physical strength – coordination – reaction time – learning and memory). Eating unhealthily (high fat diets cause blood fat or high cholesterol and tend to increase coagulation and blood clots) wrong postures adopted during walking, sitting, sleeping, scouching, illegal indulgence or over indulgence in sex, forgery, deceit, false-hood, loss, failure, threat, can cause fear, anger, violence, unhappiness, hopelessness, humiliation, loneliness, disappointment, sorrow, guilt, fatigue, stress, depression and emotional tension which affects your digestive system, electro chemical process, aerobic performance, sympathetic nervous system, which in turn upsets chemical balance of your body and ultimately impedes breathing and blood circulation.

Why your heart starts beating in a different way to different situations? It starts pounding abruptly in response to your certain acts like love, fear, loss, theft, false-hood, illegal sex, deceit, failures, fraud, forgery, because there is a linkage between your mind and your heart. Your acts have direct bearing on your mind which commands your heart. Actually a defective life style increases the risk of heart disease. Through the medium of your bad habits you keep on pounding your heart, until you have damaged it badly but you can repair and recondition your heart through the medium of good habits. (Better life style). The prognosis for bringing your heart under control are extremely bright. Because a linkage exists between your life style and your heart. The best way to improve fitness is to improve your life style and give regular lessons to your heart and mind.

SALAT is the most comprehensive regular heart and health up lift program introduced by PROPHET of Islam (SAW) which teaches your heart the lessons required for smooth running and proper functioning of your body and spirit.

Through the medium of SALAT you can change your thinking, behavior and ultimately your habits and life style. SALAT promotes an ideal natural perfect way of living and social behavior. It can lift up your heart, physique, mind and spirit if you perform it regularly and correctly but beware it can cause destruction if you perform it incorrectly.

Please note that repetitive distorted patterns of posture and movements lacking time and precision – concentration and attention damage your personality, physique, mind and spirit and block the right approach for years without any physical mental and spiritual gains.

The perfect performance improves one’s personality by improving posture. A good posture basically means that all parts of your body are in perfect balance with each other. Digestive and circulation problems, headaches, jointaches and pains can all be attributed to a bad posture, SALAT takes regular care of your head, neck, arms, chest, back, stomach, buttocks, legs, feet, hands, etc and helps to improve posture and thus checks faster ageing.

Regular performance in women prevents breast and reproductive system cancers and makes their bodies more flexible strong and beautiful. Men and women can improve the imperfections of their neck, chest, breast, waist, thighys, legs, buttocks and thus can improve their body figures by extra number of NAWAFIL of ISHRAQ and TAHAJUD. (By increasing the number of TASBIHAT from 3 to 10 or 13 in rukoo and sajdah and by aerobic performance and relaxation technique which is an integral part of SALAT).

SALAT also strengthens the natural defences of the body and protects us from the (HIV positive stances) Aids. Aids came to light only 40/50 years ago as a strange disease in the GAYMEN. Today Aids is the leading cause of death in young American men, it is spreading in South America – Europe – Africa as well as South Asia, since aids, has an average incubation period of about nine years, the stigmatization of the disease affects even the “FUTURE ILL” meanwhile the responsible retrovirus, HIV continues to spread ruthlessly. Aids can be transmitted through semen blood and blood products and by cervical and vaginal fluids. The commonest route of transmission is sexual. Most Aids cases in Europe and IJSA are among homosexual or bisexual men or are among intravenous drug users. HIV virus can also be transmitted hetro-sexually both from men to women and women to men but sex with multiple partners and prostitutes is associated with a high risk of becoming HIV positive. The responsibility for sex education? personal relationship and sexually transmitted diseases and homosexuality should be integrated into the curriculum as taught by QURAN and the PROPHET (SAW). Regular SALAT and ZIKER, removes deficiency in your immune system, a protective mechanism of human body without which life is not compatible in this hostile universe full of bacteria, germs, viruses and other harmful substances.

Salat is a natural exercise without any dumbels, barbels, bats, sticks, or rackets etc. And involves whole of the community. In other sports or games the involvement of the population is much less and the required sports gadgets drainout a considerable amount of finance as well. SALAT promotes and maintains the quality of life in all age groups. This programrme is so elaborate and perfect that it reduces the risk of sudden death by heart attacks after every performance. Salat is actually an elaborate exercise and unique therapy of natural body movements of all body parts-muscle groups, bones and joints. During different postures of Salat the bones, muscle groups, joints of the body are tensed, stretched and contracted in parallel as well in opposite direction and are stretched to their maximum limits which improves their natural functions. Salat during correct performance also increases the blood flow to all body parts including brain and ultimately the oxygen supply is increased. Extra oxygen supply is the key to the body’s health. Less supply of oxygen starts diseases. It also upgrades the immune system of the body.

Research on the effects of SALAT for conditions which are themselves risk factors for heart disease, such as stress, high blood pressure, obesity and diabetes explain the mechanism through which SALAT acts to protect against heart disease.

  1. Human body contains an organism, machinery and quality, necessary for the prevention of disease, it can function best in resisting disease and maintaining its own health when it is structurally mobile, flexible and strong
  2. SALAT through the management of structural balance and improved physical strength releases rigidity and tension which increases physical and mental relaxation and induces satisfaction.
  3. We know that stress activates sympathetic nervous system, which results in an increase in blood pressure – heart rate respiratory rate and muscle tension. SALAT employs relaxation therapy to counter the effects of stress on blood pressure by changing the individual’s physiological response to stress, depression and tension. During performance the body is stretched as well contracted in parallel and opposite directions and is stretched to its maximum limits which improves its natural functions.
  4. SALAT also applies aerobic therapy aimed towards decreasing respiratory rate through the recitation of the verses of QURAN and phrases (TASBIHAT) (specially the depth of breathing is increased) etc. Salat has two parts Aqwal, (reading, theory) and Afaal (performance and practical exercise). Reading in Salat is also a measure of time, it means that how much time one should remain in a fixed posture of standing erect (Qiyam), Bending (Ruku), Prostration (Sajda), Sitting (Jalsa) and Final Sitting (Qada). During these postures the bones, muscle groups and joints of the body are tensed, stretched and contracted in parallel as well as opposite directions which affects the respiratory system and blood pressure also and improves the functions of the body.
  5. Relationship between performance of SALAT and blood pressure is inverse. Higher the repetitions {No. of RAKATS} normal is the blood pressure.
  6. Regular performance strictly according to Methodology, significantly balances the blood pressure specially in those who already have moderately high blood pressure.
  7. Specially elderly people those who perform regularly are less likely to be over weight or obese and have better control of glucose.
  8. AEROBIC and relaxation exercise during and after SALAT speeds up process of breaking of blood clots on a much quicker pace and helps reduce body fat which is burned for fuel. It also reduces blood fat levels aiding the removal of artry damaging cholesterol.
  9. It also increases the body’s sensitivity to insulin and clears excessive sugar from the blood. Helps increase the calcium and mineral contents and prevents weakening of the bones and fractures. The glands producing insulin are activated and produce extra insulin.
  10. It highly invigorates our nervous system and strengthens the muscles and weak body parts by preserving flexibility and restoring their normal function.
  11. SALAT {Specially SALAT UL TASBIH} checks progressive degenration of brain cells and stimulates the growth of key cells and nerves and adds potential to increase our ability to beat the mental disease. It also promotes sound sleep.
  12. There is now evidence which suggests that SALAT promotes good relationship with lovers, relatives, friends and other human beings which is important in the maintenance of good mental health and it helps to protect against negative effects of life events, including separation, divorce, occupational stress, behaviour disorders and illness in the elderly. People under constant stress are pessimistic dissatisfied and have low resistance to illness. Correct performance relieves stress immediately. SALAT is also a very good tranquilizer and anti-depressant and gradually builds up endurance confidence and satisfaction.
  13. If SALAT is performed correctly the blood flow to all body parts including brain is increased and ultimately the oxygen supply is also increased. Extra oxygen supply is the key to the body’s health. Breathing and circulatory system works harmoniously and gains greatest benefit from the activity of SALAT, entire body starts functioning efficiently, and healing power is strengthened.
  14. Life events, circumstances, changes, unconscious responses, ill health, have the potential to raise pressure, tension, depression, stress and fear in your life. Salat Therapy is extremely effective at relieving pressures like stress, tension, depression, fear and behaviour disorder immediately.
  15. SALAT also improves the posture, slows down ageing, makes life more enjoyable, encourages emotional balance, improves physical ease and self confidence improves sleep and adds greater sense of relaxation.
  16. The creator (Allah, God, Eshwar) has gifted every human being to live for a 100 years on his own free will independently till the end. With the help of Salat Therapy you can rid yourself of the pain, anxiety and fear and strengthen your future life to feel better than you currently do. And become healthier, happier, more confident, fully satisfied and secure person in physique, mind and spirit. If you apply it correctly you will see a rapid change coming to you within 3 to 5 weeks. And this program shall put you in total control of yourself to reclaim and enhance your life span also.
  17. Research now shows that much of the loss of fitness in old age is not inevitable and results from disuse, rather than from the ageing process itself. Extra, moderate rhythmic, regular SALAT has a number of demonstratable effects, improved cardio vascular function, improved muscle size and improved maintenance of posture improved joint stability and improved oxygen intake. Improved self confidence and self esteem, anti depressant, reduction in anxiety improved endurance and satisfaction, improved stamina, suppleness and strength. These benefits could be obtained within 20 to 30 weeks of the performance and are maintainable till the regularity is maintained.

Please Note that Muslim traditional Salat is worthless rather it is destructive, as now a days Muslims Arabs and Non-Arabs alike only bother for recitation and not for practical performance, and they do not bother for the methodology explained in Hadith, which is the essence of Prayer/Salat. Correct methodology gives 100 % results, but wrong postures adopted in Salat become destructive rather than beneficial, as explained in Quran Sura-e-Mauoon.

The exercise of Salat is for Muslim and non-Muslim alike, but for non-Muslim it is difficult to understand the terminology, as such we are willing to impart training anywhere at any place if required. If any University, College, Research Institute, Hospital is willing to introduce it anywhere at their end. Only 3 to 6 months are required to check its credibility. The experiments to assess its credibility could immediately be started under the supervision of authorities at their end. Please also note that it is not necessary to change your belief, faith, religion, school of thought, doctrine, or dogma to learn Salat Therapy.

Please do try it. It will benefit you and your family members. For training and information please contact

Sardar Aftab Ahmed Chiarman Al Salat Trust

Performance of Salat

PERFORMANCE OF SALAT

Procedure: After ablution (Wuzu)

Ablution before Salat is a must for the person who is to perform the Salat. Sura e Al-Maida in Quran says ‘O you faithfull when you are to pray wash your face (Eyes, nose, ears, and mouth including teeth) and your hands and arms upto the elbows and pass your wet hands over your head and wash your feet upto your ankles and if you are in a state requiring total ablution purify yourself (take bath, this includes washing of private parts also).

Objective: (Niyat)

Standup (there shall be a gap of 2/3 meter (27 inches) between your feet) and pronounce with a low voice the Niyat. (I intend to offer 2 Rakats of Salat ul Farz or sunnat as Salat ul Fajar or Zohar or Asar etc) Then pronounce Takbeer (Allah-o-Akbar) lift your both hands above your shoulders facing your palms and face towards Kaaba and then wrap your hands upon your belly right hand upon the left hand hold your wrist and stand Erect.

  • Straighten your neck
  • Straighten your back
  • Straighten your legs

Then read Sana + Fatehah + One Small Surah and pronounce Takbeer then bow (bend) and go in Rukoo. Keep your sight at your feet.

  1. Straighten your back parallel to the ground.
  2. Keep your head in line with your back
  3. Keep your legs straight, no bending at the knees.
  4. Grip tightly your kneecaps with your fingers and pronounce 10, 13 Tasbeehat (Subhan Raby Yal Azeem) then pronounce Sami Allah Holey Mun Hameedah and stand erect for 5 seconds then say Raba Na Wa Lakal Hamd then say Takbeer and go in Sujjud. (Prostration)
  • First touch the ground with your knees and then put your hands on the ground (there shall be a gap between your hands from shoulder to shoulder) while your forearms should be perpendicular to the ground. Then rest your head on the ground there shall be a gap of about one meter between your head and your knees so that your body stretches like a bow; your nose should also touch the ground/ Push the ground with your toes (fingers of your feet) , your toes should lay completely on the ground and keep your feet erect and pronounce Tasbeehat 10 or 13 (Subhan Raby Yal Ala’a), keep your eyes open, then pronounce Takbeer, while rising from prostration push your body with your hands or fists and sit straight and pronounce Dua (Allah Hummagh Firlee War Hamni Wajburni Wahhidani Warzukni) then say Takbeer and again go in Sujjud (prostration) and repeat Tasbeehat. Then pronounce Takbeer and raise your head and hands from Sujjud, sit for a while (5 seconds), then stand up on your toes and repeat the process in second Rakat.
  • At the end while sitting, sit erect with straight back and raised head, keep your hands upon your knees and grip with your left hand your knee and raise right finger of your right hand once or more and make a ring with your thumb and center finger. And while sitting pronounce Tashahud (Attahiyat To LILAH HAY) at the end turn your face first to the right with head movement up to your shoulder then to the left and pronounce Asslamo Alaikurn Wa Rahmatullah on both sides. This is the end of two Rakats of Salat.

The same procedure will be followed when you are performing 4 rakats of Salat. Except that if you perform Farz or (obligatory Salat) then in the last two rakats after Fatehah you will pronounce Takbeer and go in Rukoo and in Nawafil (Supererogatory) you will read any small surah after Fatehah and then pronounce Takbeer. This is the end of Salat.

Please Note that with correct methodology / performance you will achieve your results quickly. This method is not only a life saver but it enhances your life span also and your regular performance is an act of investment for your happy and comfortable future life. Your body contains an organism, machinery, quality and system, necessary for the prevention of diseases.

For other exercises you need a Gym, a court, a play ground, a track and many gadgets like barbells, dumbbells, rackets, sticks, balls, bats, nets etc but this exercise could be carried out anywhere in your office, house, lawn on a small carpet (Sajjada).

Please do not hesitate to contact us for any inquiry.

Chairman

Al Salat Trust

 

A Message to Readers

Dear Readers,

Peace Be Upon You,

MUHAMMAD (SAW), saviour and Master Healer of mankind invites you to his most selective self help programme to rid you of all physical, mental and spiritual ailments and to teach you to develop your real personality, physical beauty, inherent strength, mental well-being, spiritual elevation and a unique and healthier life style till yet unknown to you.

A style for the attainment of highest capabilities of man and woman inside you. A systematic physical, mental and spiritual health raising programme for you and your family.

Discover the secrets hidden inside your body by educating yourself from the experiences and practices of MUHAMMAD (SAW) The Supreme man who educates you to spring into the real existence by the most efficient way to build and concentrate energy to gain perfection in physique mind and spirit.

Avail this opportunity, to enhance your stamina, strengthen your immune system improve your healing power and protect yourself from MAJOR deadly diseases through “SALAT THERAPY” which extends the benefits of prevention treatment and cure within and beyond the heart. It ensures complete protection against Heart attacks, Angina, Cardio Vascular and Coronary artery disease, Stroke, T.B, Cancer, Aids, Arthritis-Diabetes, Emotional disorders, Psycho social adversity and adds happiness satisfaction and inspiration to your life style.

Learn the methodology for correct performance and its application to rehabilitate and re-condition your heart and other vital parts of your body by yourself with the application of “Salat Therapy” five times a day and for rapid recovery 8 times a day. Learn the correct application for long and short term therapy, a therapy without medicine.

Salat therapy combines.

  1. Hydro therapy
  2. Physio therapy
  3. Relaxation therapy
  4. Psycho therapy
  5. Aerobic therapy
  6. Prayer therapy

The correct application and performance ensures,

  1. Confidence-life satisfaction happiness and inspiration.
  2. Rapid and evident relief of symptoms of stress depression and Fatigue.
  3. Strengthens your immune system and removes immune deficiency.
  4. Regular practice culminates into positive thinking and relaxation.
  5. Decrease in heart rate.
  6. Checks enlargement of heart and reduces its size to normal.
  7. Increases the depth of breathing.
  8. Excellent tolerability and convenience for all age groups, 10 years and above.
  9. High reliability. Reduction in risk of death.
  10. Ensures 100% protection against heart attacks.
  11. Extended benefits within and beyond the heart. Increase in life span.
  12. Increased physical activity and improved work performance.
  13. Eliminates the risk of fatal stroke. Reduces your blood pressure to normal and cures Hypertension within 5 to 10 weeks.
  14. Long-term life saving cardio vascular protection.
  15. Sure cure against Angina. Removes angina within 10 to 15 weeks completely.
  16. Improves the survival rate of patients.
  17. Most comprehensive stress management and life-improving programme.
  18. Do-it-yourself formula for regular application.
  19. Cures Diabetes with regular practice. Within 20 to 30 weeks you will burn extra amount of fat and sugar in your body and become normal.
  20. Stops degeneration of brain tissue.
  21. Regular practice removes obstructions from the coronary arteries and you can avoid a by pass.

Our salattherapy.com is dedicated for all human beings who seek knowledge, wisdom and a happy and healthy life style free of all ailments and perfect living, natural full of joy and satisfaction. Ultimate aim of life is to live independently, peacefully without any fear and prejudice till the end.

The creation of man is a scientific miracle. Its living should be absolutely scientific. The creator (Allah, God, Eshwer) has installed all the necessary gadgets preservers, healers, cures, and defenses inside your body. You are simply to activate them to do their job. Salat Therapy is a therapy of natural body movements which activates these hidden natural powers and helps complete the process of healthy living free of all diseases without any medicinal support.

It is only the methodology of Salat which matters and gives you 100% results. Please try to learn the methodology (as explained in performance of Salat) and live a life free of fear and doubt, fully satisfied and full of joy.

We certify that Salat Therapy prevents treats, heals and cures the most deadly diseases and it enhances your life span as much as you like.

We certify that if your performance is perfect (which is not very difficult to learn) you will not die of a heart attack or any heart ailment.

Please note that in a months time you will feel the difference and improvement in your body physique and the satisfaction and your confidence will enhance and you will attain perfect fitness, if you make it a daily practice.

S.Aftab Ahmed

 

Salat & Translation


Allahu ak bar

Allah is supreme.

Subhana Kal-lah hum-ma wabi hamdika wata-bara kasmuka wata’ala jad-duka wala ilaha ghyruka.

Glory is for Allah, and all praises are due unto him, and blessed is his name and high is his majesty

A’uzu bil-lahi minash Shayta-nir-rajeem

I seek Allah’s protection from Satan who is accursed.

Bismillah hir-Rahma nir-Raheem

In the name of Allah, the most beneficent, the most Merciful

Alhamdul lil-lahi rab-bil ‘alameen Ar rahma nir-raheem Maliki yawmid-deen Iyyaka na’budu wa iyyaka nasta’een Ihdinas siratal mustaqeem Siratal Lazeena an’amta ‘alayhim Ghai-ril maghdubi ‘alayhim Walad dal-leen. Ameen

Translation: All praise is for Allah, Lord of the Universes. Most beneficent, the most Merciful. Master of the Day of Judgment. You alone we worship and to you alone we pray for help. Show us the straight path, Path of those whom you have blessed. And not of those who ignited your anger, and gone astray.

Qul huwal lahu ahad. Allah hus-Samad. Lam yalid walam yulad. Walam yakul-lahu Kufuwan ahad.

Say: He is Allah, the only one. Allah helps and does not need help. neither any one is born of him nor he is born of anyone. There is none equal to Him.

Allahu akbar

Allah is supreme.

Subhana Rabbi’al Azeem “Glory to my Lord the Exalted”.

Sami Allahu Liman Hamidah “Allah listens to those who praise Him”

Rabbana lakal Hamd “Oh our Lord, all praise is to you”.


Allahu ak bar

Allah is supreme.

Subhana Rabbi yal A’ala Glory to my Lord, the most high.”

 AttahiyyaatuLillahi Was Salawatu Wattayyibatu Assalamu Alaika Ayyuhannabi ‘yu ‘Warahmatullahi Wabarka’tuhu Assalamu Alaina Wa’ala’Ibadillahis Saa’liheen, Ash’had’u'un La ilahaillallahu Wa Ash’hadu Anna MuhammadunAbd’uhu Wa Rasooluh All compliments, all physical prayer and all monetary worships are for Allah. Peace be upon you, Oh Prophet, and Allah’s mercy and blessings. Peace be on us and on all righteous slaves of Allah. I bear witness that no one is worthy of worship except Allah And I bear witness that Muhammad is His slave and Messenger

Allahumma Salleh Alaa Muhammadin Wa’ala’ Aale Muhammadin Kama Sallaiyta Alaa Ibraheema Wa’ Ala Aale Ibraheema InnakaHameedum Majeed Allahumma Baarak Alaa Muhammadin Wa’ Ala Aale Muhammadin Kama Baarakta Alaa Ibraheem Wa’ Ala Aale Ibraheema Innaka Hameedum Majeed Oh Allah, send grace and honour to Muhammad and to the family and true followers of Muhammad just as you sent Grace and Honour to Ibrahim and to the family and true followers of Ibrahim Surely, you are praiseworthy, the Great. Oh Allah, send your blessing to Muhammad and the true followers of Muhammad, just as you sent blessings to Ibrahim and his true followers Surely, you are praiseworthy, the Great

Rab bij’alnee muqeemas salati wa min zur-riy yatee rab-bana wata qab-bal du’a, rab-ba nagh-firlee wali waliday-ya wa lil mu-mineena yawma yaqumul hisab. Oh Lord, make me and my children keep up prayers, Our Lord, accept our prayer, Our Lord, forgive me and my parents and all the Believers on the Day of Judgement. Rabbana Aatina Fid Duniya Hasanatanw Wafil Akhirati Hasanatanw Wa Qina Azaaban Naar “Our Lord, grant us the good of this world and that of the Hereafter and save us from the torture of hell.”

Assalamu Alai’kumWarah’matullah “Peace and mercy of Allah be on you”. On both sides

Dua Qunoot (to be recited in the 3 rakat Witr Prayer at the end of third rakat after alhamdu and surat then touch ears and say allahu akbar and recite this dua) Allah humma inna nast’eenuka wa nastaghfiruka wa nu’minu bika wa natawak-kalu ‘alayka wa nuthne ‘alayk-al khayr. Wa nashkuruka wa laaa nakfuruka wa nakhla’u wa natruku man-y yafjuruka. Allah humma iyyaka na’budu wa laka nusal-lee wa nasjudu wa ilayka nas’a wa nahfidu wa narju rahmataka wa nakhsha ‘azabaka inna ‘azabaka bil kuf-fari mulhiq. Translation: Oh Allah, we ask your help and seek your forgiveness, and we believe in You and have trust in You, and we praise you in the best way and we thank You and we are not ungrateful, and we forsake and turn away from the one who disobeys you. O Allah, we worship You and pray to You and prostrate before You, and we run towards You and serve You, and we hope to receive your mercy, and we fear your punishment. Surely, the disbelievers will receive your punishment.

Research Base

Our research is based on these verses (ayat)
(Sura Yunas Verse No. 57).
O mankind! there hath come to you a direction from your Lord and a healing (cure) for the (diseases) In your hearts,- and for those who believe, a guidance and a mercy.
(Sura Isra Verse No. 82).
We send down (stage by stage) In the Qur’an that which is a healing (cure) and a Mercy to those who believe: to the unjust it causes nothing but loss after loss.
Hadith (حدیث )
Abdul Malik bin Umair quoted that the Prophet (PBUH) said that in Sura-e-Al-Fateha there is a cure for every disease.

قارئین کے لئے پیغام

محترم گرامی قدر قارئین کرام

اسلام علیکم

نبی کریمؐ نے ایمان کے بعد نماز کو دین کا ستون اور اہم رکن قرار دیا ہے۔ جس پر دین اسلام کی پوری عمارت کھری ہے۔ قرآن مجید میں تقریباً سات سو مرتبہ سے زیادہ نماز کی تلقین کی گئی ہے۔
حضورؐ نے اپنی مبارک زندگی میں نماز کی ادائیگی کا صحیح طریقہ سکھلایا ہے، ارشار نبوی ہے

صَلُّو اکَمَا رَاَیتُمُونِی اُصَلَّی
ترجمہ: نماز ایسے ادا کرو جیسے مجھے ادا کرتے دیکھتے ہو
نماز پر عمل کرنے کا طریقہ یعنی، قیام۔رکوع۔ سجود۔ جلسہ اور قعدہ وغیرہ مجھے دیکھ کر ادا کرو۔ نماز اللہ تعالیٰ کی طرف سے مسلمانوں کے لئے ایک عظیم تحفہ ہے ۔ جس میں اللہ تعالیٰ نے مکمل جسمانی اور روحانی شفاء رکھی ہے۔ اور یہ انسانی جسم کو بتدریج ترقی دیتی ہے عمر کو بڑھاتی ہے۔ اور انسانی حسن میں اضافہ کرتی ہے۔ لیکن اس عظیم عمل کو مسلمانوں نے صرف رسم بنا لیا ہے۔ جس کی وجہ سے وہ نماز کی برکات اور فوائد سے محروم ہو گئے ۔

یہ حقیقت میں مسلمانوں کی غیر نصابی سرگرمی ہے۔ جس سے ہم نے ہاتھ کھینچ لیا ہے۔ یعنی مسلمان نماز کے تمام اعمال نبی ۖ کے بتائے ہوئے طریقہ کے مطابق نہیں ادا کرتے ۔ بلکہ ملاّ کو دیکھ کر ادا کرتے ہیں۔ملاّ اور پیر نے ہمیں نبیۖ کے عمل سے بے گانہ کر دیا ہے۔ ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ ہم نبی ۖ کو رول ماڈل بناتے۔ لیکن بے علمی کی وجہ سے ہم نے ملا و پیر کو اپنا رول ماڈل بنا لیا ہے۔ نماز ایسا عمل ہے جس میں پڑھنا اور عمل کرنا دونوں شامل ہیں۔ لیکن ملا و پیر نے فقط نماز کو پڑھائی تک محدود کر دیا اور اس کا عملی حصہ عمومی طور پر ایسے ادا کرتا ہے جو حدیث نبوی ۖ کے سراسر خلاف ہے۔ جس کی وجہ سے عوام الناس نماز کے فیوض و برکات سے محروم ہیں۔ لہذا ہمیں حضورؐ کو اپنا رول ماڈل بنانا چاہیئے۔ تاکہ ہم نماز کی صحیح ادائیگی کی بنیاد پر تمام روحانی اور جسمانی فوائد اور برکات سے مستفید ہو سکیں۔

اگر مسلمان نماز حضورؐ کی سنت اور آپؐ کے بتائے ہوئے طریقہ کے مطابق ادا کریں تو تمام مسلمان ملکوں میں ہسپتال ویران ہو جائیں۔ اور مسلمان قوم صحت مند، تندرست و توانا، بیماریوں سے مبّرا قوم بن کر دنیا کے لئے رہنما رول ادا کر سکتی ہے۔ نماز کا عمل خواتین کے لئے ویسا ہی ہے جیسا مردوں کے لئے ہے۔ جیسا کہ نماز کے بارے میں حدیثوں سے ظاہر ہوتا ہے ۔

ارشاد باری تعالیٰ ہے۔

فَوَيلٌل ِلّلمُصَلِّينَ (٤) الَّذِينَ هُم عَن صَلاتِھِم سَاهُونَ (٥)

ترجمہ : مکمل تباہی و بربادی ہے ان نمازیوں کے لئے جو نماز کی غلط ادائیگی کرتے ہیں۔

اس واضح ارشاد کے باوجود مسلم امّہ اندھوں اور بہروں کی طرح نماز کی غلط ادائیگی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ جس کی وجہ سے نماز کی برکات اور فوائد اور شفاء سے پوری امت محروم ہے۔

قرآن مجید میں ارشاد ربانی ہے۔

و نُنزل من القرآن ماھو شفآء ورحمة اللمومنین

قران مجید کے اتنے بڑے دعویٰ کے باوجود تمام مسلم امّہ آج اس شفاء اور رحمت سے محروم ک یوں ہے اس لئے کہ ہم سنت نبویۖ کے مطابق نماز ادا نہیں کرتے ۔اگر سنت کے مطابق نماز ادا کی جائے تو اس سے مندرجہ ذیل بیماریوں سے شفاء ممکن ہے۔ ہائپر ٹینشن، ذیابطیس (شوگر) ، دل کی بیماریاں، انجائنا، دل کا درد، سینہ کا درد، تپ دق، بازوؤں کا درد، سانس کا پھولنا، ذہنی پریشانی، انجانا خوف، پاؤں کے تلوؤں کا درد، پٹھوں کا درد، اور پٹھوں کا کھنچاؤ، جسمانی نا آسودگی ، جسم کا اکڑ جانا، پیٹ کادرد، دانت کا درد، کان کا درد، گردے کا درد، برین ہیمریج، فالج، لقوہ، تھکاوٹ، جسمانی کمزوری، گردوں کا درد اور گردن کی ہڈی کے نقائص، ریڑھ کی ہڈی کے نقائص اور خواتین کی بیماریوں مثلاً چھاتی کا کینسر، رحم کا کینسر آپریشن سے بچہ کی پیدائش سے نجات حاصل ہو سکتی ہے۔ مندرجہ بالا بیماریوں سے نماز کی صحیح ادائیگی کے ذریعہ تین سے چھ ماہ کے مختصر عرصہ میں مکمل نجات حاصل کی جاسکتی ہے۔ لہذا ہمیں زندگی کی پہلی فرصت میں نماز کی صحیح ادائیگی کا عمل سیکھنا چاہئے ۔

کیونکہ نماز میں وہ تمام ضروری ورزشیں (غیر نصابی سرگرمیاں) مدون ہیں۔ جو انسانی صحت کے لئے انتہائی ضروری ہیں۔ اسی لئے نماز کو دعوت تامہ کہا گیا ہے۔ اگر نماز سنت کے مطابق ادا کی جائے تو کسی ورزش اور کھیل کی ضرورت نہیں رہتی۔ الصلواة ٹرسٹ نے نماز کی صحیح ادائیگی کا طریقہ اور مکمل پریکٹیکل کروانے کا اہتمام کیا ہے۔ جس کیلئے قرآنی آیات اور احادیث رسول ۖ پر مبنی لٹریچر دستیاب ہے، تاکہ آپ کو نماز کی صحیح ادائیگی کا ادراک حاصل ہو سکے۔ الصلوة ٹرسٹ نے اس سلسلہ کو آگے بڑھانے کے لئے باقاعدہ ٹیچر کا اہتمام کیا ہے ۔ جس سے آپ بلا معاوضہ مستفید ہو سکتے ہیں۔ یاد رہے کہ جو لوگ نماز کی ادائیگی کے باوجود مختلف اور مہلک قسم کی بیماریوں میں مبتلا ہیں انہییں جان لینا چاہیئے کہ وہ نماز کو نبویۖ طریقہ کے مطابق ادا نہیں کر رہے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس تباہی و بربادی سے بچنے کی توفیق عطا فرمائے۔

نوٹ
اگر کو تحقیقی ادارہ، کالج یا یونیورسٹی حقائق (کریڈیبلٹی) جاننے کے لئے تحقیق (ریسرچ) کرنا چاہے، تو الصلوة ٹرسٹ ان کی مدد کے لئے تیار ہے۔

چئیرمین الصلٰوة ٹرسٹ
سردار آفتاب

اسلام ، قران اور سائنس

مسلمان ہونے کے ناطے ہم پر یہ فرض عائد ہوتا ہے کہ ہم قرآن کو سمجھنے اور اس پر عمل کرنے کی شعوری کوشش کریں۔ جو ہماری شخصی اور اجتماعی زندگی کی بنیاد ہے۔
جب تک ہم قرآن کو سمجھیں گے نہیں ہم دنیا میں عظمت اور بلندی حاصل کرنے میں ناکام رہیں گے۔ مسلمانان عالم کو اپنی موجودہ حالت پر غور و فکر کرنا چاہیے ۔ ہم دنیا میں سینکڑوں کتابیں پڑھتے ہیں ، بڑی بڑی ڈگریاں حاصل کرتے ہیں ۔ لیکن ایک اہم آسمانی کتاب قرآن کی طرف ہماری توجہ نہیں ہے۔ ہم نے قرآن کو صرف ثواب کمانے کا ذریعہ بنایا ہوا ہے ۔ سمجھ میں نہیں آتا کہ ہم خود (مسلمان) قران سے اتنے خوفزدہ کیوں ہیں۔ علما ء حضرات اپنی تقریروں میں بے شمار کتابوں کا حوالہ بھی دے دیتے ہیں۔ روایات گا گا کر لوگوں کو سناتے ہیں۔ کبھی کبھی ایک آدھ قرآنی آیت کا حوالے بھی دیتے ہیں۔ لیکن قرآن پڑھنے ، اسے سمجھنے اور اس پر عمل کرنے کی نہ خود شعوری کوشش کرتے ہیں ۔ نہ عام مسلمانوں کو اس پر عمل کرنے کی ترغیب دیتے ہیں۔ بہت افسوس سے کہنا پڑتا ہے ۔کہ ہم خود بہت سے علما حضرات سے یہ سن چکے ہیں کہ قرآن بہت مشکل ہے۔ اس کو سمجھنے کے لئے انسان کو عالم ہونا چاہئے۔ ہمیں چونکہ عربی زبان نہیں آتی اور قرآن کا مکمل ترجمہ تو کسی بھی زبان میں نہیں ہو سکتا ۔ لہذا مجبوری ہے ، ہم کیا کریں۔ حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ قرآن پاک کا ترجمہ دنیا کی بہت سی زبانوں میں ہو چکا ہے ۔ اگر یہ مان بھی لیا جائے کہ قرآن کا ترجمہ مکمل طور پر نہیں ہو سکتا تو جتنا ترجمہ ہو چکا ہے ۔ اس سے تو فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے ۔ اگر ہم روایات ، احادیث وغیرہ کا ترجمہ آسانی سے پڑھ سمجھ کر دوسروں کو سنا سکتے ہیں تو قرآن کو اردو زبان میں پڑھنے اور سمجھنے میں کیا مشکل پیش آ سکتی ہے۔ حالانکہ قرآن کریم کے بارے میں اللہ تعالی کا ارشاد ہے
“اور ہم نے قرآن کو سمجھنے کے لئے آسان کر دیا ہے تو ہے کوئی سمجھنے والا”
محمد رسول اللہ سے کسی نے پوچھا کہ اللہ کے رسول ہر پیغمبر کا معجزہ تھا ۔ آپ کا کیا معجزہ ہے تو رسول اللہ نے فرمایا “اللہ کا لفظ یعنی قرآن کریم”
ہمارے لئے ضروری ہے کہ دنیا کے دوسرے علوم کے ساتھ ساتھ ہم قرآن کا بھی علم حاصل کریں ۔ اسے پڑھیں ، سمجھیں اور پھر اس پر دل کی گہرائی سے عمل کرنے کی کوشش کریں۔ اسی میں ہماری دنیا و آخرت کی بھلائی کا انحصار ہے۔
کائنات کا سائنسی علم ایک مومن کی میراث ہے ۔ جسے وہ بدقسمتی سے صدیوں پہلے گم کر چکا ہے۔
قرآن کریم میں 750 مرتبہ مسلمانوں کی توجہ سائنسی حقائق کی طرف مبذول کرائی گئی ہے۔ مثلاً
“یقیناً کائنات کی بلندیوں اور پستیوں کی تخلیق اور لیل و نہار کی گردش میں صاحبان عقل و بصیرت کے لئے حقیقت تک پہنچنے کی بڑی بڑی نشانیاں ہیں۔ 3/190-189
یہ اور بات ہے کہ ہم سائنسی حقائق اور انکشافات کو بھی جنوں ، پریوں کی داستانیں یا کسی دوسرے جہاں کی باتیں سمجھ کر نظر انداز کرتے جا رہے ہیں۔
سورۃ انفال آیت 22 ۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے
“یقیناً اللہ کے نزدیک بدترین قسم کے جانور وہ بہرے ، گونگے لوگ ہیں۔ جو عقل سے کام نہیں لیتے۔ ”
قرآن قیامت تک نوع انسانی کے لئے سراسر ہدایت ہے ۔
یہ فزکس ، کیمسٹری ، حساب، و معاشیات وغیرہ کی کتاب نہیں ہے۔ ہاں قرآن میں اللہ تعالی نے بہت سے حقائق ، قوانین جو نوع انسانی کی بقا اور ترقی کے لئے ضروری ہیں۔ بیان فرما دیتے ہیں تاکہ ہم ان سے رہنمائی حاصل کریں اور جو غلطیاں ہم سے پہلے آنے والے کر چکے ہیں۔ ان سے بچ کر تباہی سے محفوظ رہ سکیں ۔ کچھ قوانین و اصول جو نسل انسانی کی بقا کے لئے ضروری ہیں۔ انہیں اللہ تعالی نے خود متعین فرمایا دیا ہے۔ تاکہ ان کی حدود میں رہتے ہوئے ہم ارتقا کی منازل طے کرتے جائیں اور اسطرح اس دنیا میں بھی خوشگواریاں حاصل کریں اور آخرت میں بھی انعامات کے حقدار ٹھہرائے جائیں۔ عام طور پر ہمارے پڑھے لکھے افراد کی اکثریت اسلام کو اپنی ترقی (مادی) کی راہ میں رکاوٹ سمجھتی ہے۔ جہاں تک قرآن کا تعلق ہے توہم نے اسے صرف چومنے اور ثواب کمانے کا ذریعہ سمجھا ہوا ہے۔ مغرب والوں نے بھی اسلام کے خلاف یہی پروپیگنڈہ کیا ہے ۔ کہ اسلام چودہ صدی پہلے کا مذہب ہے ۔ آج کے ترقی یافتہ دور میں اسلام ہمارا ساتھ نہیں دے سکتا ۔ لہذا جس طرح مغرب نے عیسائیت کو صرف گرجا تک محدود کر دیا ہے۔ اسی طرح اسلام کو بھی صرف مسجد تک محدود کر دینا چاہیے۔ مغرب کی اس آواز پر لبیک کہتے ہوئے اسلامی ممالک کے مغربی تعلیم سے آراستہ افراد کی ایک اچھی خاصی تعداد بھی اسی نقطہ نظر کی حامی بن چکی ہے۔
ان کا خیال ہے کہ مغرب نے جو ترقی کی ہے وہ اسی لئے ممکن ہوسکی کہ انہوں نے مذہب سے جان چھڑا لی تھی۔ مذہب اور سائنس دو متضاد چیزیں ہیں۔ یہ دونوں کبھی بھی اکٹھے نہیں ہو سکتے ۔ جہاں تک عیسائیت کا تعلق ہے اس نے واقعی یورپ میں علم دشمنی پر کمر باندھے رکھی۔ ایک مشہور مغربی مفکر مسٹر اے ای ٹیلر لکھتے ہیں کہ ” میں کسی ایسے سائنٹفیک اور خدا کی طرف دعوت دینے والے مذہب کو خوش آمد ید کہوں گا جو ہمیں فطرت انسانی اور ایسی مضحکہ خیز تہمت پر ایمان رکھنے کی ضرورت سے بچا لے۔ ”
یاد رہے کہ عیسائیت نے شر کو انسان کی فطرت میں مستقل طور پر داخل کر دیا تھا۔ لیکن اسلام اور قرآن کے بارے میں یہ نظریہ درست نہیں ہے۔ قرآن ہمیں غوروفکر کی دعوت دیتا ہے اسلام نے ہی آج سے چودہ سو سال پہلے جہالت کی تاریکی کو دور کیا تھا۔ مسلمانوں نے اپنے دور عروج میں وہ کارہائے نمایا ں سرانجام دئیے جن کی ان سے پہلے تاریخ میں کوئی مثال نہیں ملتی۔
جو شخص محض مغربی پراپیگنڈے سے متاثر ہو کر اسلام کے بارے میں بہتان باندھتا ہے اس کے بارے میں اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان کافی ہے۔
” بکثرت لوگوں کا حال یہ ہے کہ علم کے بغیر محض اپنی خواہشات کی بنا پر گمراہ کن باتیں کرتے ہیں۔ ان حد سے گزرنے والوں کو تمہارا رب خوب جانتا ہے۔ ” سورۃ الانعام آیت 119
اسلام اور علم لازم و ملزوم ہیں ۔ رسول اللہ کی حدیث ہے ۔ علم (سائنس) حاصل کرو چاہے تمہیں چین جانا پڑے۔
رسول اللہ کے نزدیک علم کی کیا اہمیت تھی ۔ اس کا اندازہ اس واقعہ سے بخوبی ہو جاتا ہے۔ جنگ بدر میں کفار کے جو افراد میدان جنگ سے قیدی بنائے گئے۔ ان میں سے جو افراد جزیہ نہیں دے سکتے تھے۔ ان سے کہا گیا کہ وہ مدینہ کے دس دس بچوں کو پڑھنا لکھنا سکھا دیں۔
جو قوم اتنے مشکل حالات میں کہ جب اس کی بقا کو خطرات لاحق ہوں اس کی آزادی داؤ پر لگی ہو ۔ علم کے بارے میں اتنی حساس ہو وہ کبھی علم دشمن ہو سکتی ہے؟
جہاں تک قرآن کا تعلق ہے اس کے بارے میں ہم مشہور فرانسیسی مفکر ڈاکٹر فورس بکائیل کے یہ الفاظ نقل کریں گے ۔ جو انہوں نے اپنی کتاب بائیبل ، قرآن اور سائنس میں قرآن کے بارے میں کہے ہیں۔ وہ لکھتے ہیں۔
قرآن میں کوئی ایک بیان بھی ایسا نہیں ہے کہ جو موجودہ ترقی یافتہ سائنسی انکشافات سے متصادم ہو۔
اسلام کے بارے میں ڈاکٹر صاحب لکھتے ہیں
کہ اسلام میں مذہب اور سائنس ہمیشہ دو جڑواں بہنیں رہی ہیں۔
حقیقت یہ ہے کہ اسلام ہمیں آگے ہی آگے بڑھنے کی تعلیم اور دعوت دیتا ہے ۔ وہ قوموں کی قیادت کا تاج ہمارے سر پر رکھنا چاہتا ہے ۔ یہ اور بات ہے کہ ہم اپنی کم فہمی اور علم کی کمی کی وجہ سے اس کے پیغام کو سمجھ نہیں پا رہے ہیں۔
قرآن ہمیں غوروفکر کی دعوت دیتا ہے ۔ قرآن کریم میں ارشاد ربانی ہے۔
“تم سے پہلے بہت سے دور گزر چکے ہیں۔ زمین میں چل پھر کر دیکھ لو ۔ ان لوگوں کا انجام کیا ہوا۔ جنہوں نے اللہ کے احکام و ہدایت کو جھٹلایا۔ سورۃ آل عمران آیت نمبر 137
جیسا کہ پہلے بیان ہو چکا ہے ۔ قرآن میں 750 مرتبہ مسلمانوں کی توجہ سائنسی حقائق کی طرف مبذول کرائی گئی ہے ۔ اگر ہم خود اس پر توجہ نہ دیں تو اس میں قصور اسلام یا قرآن کا نہیں ۔
زیادہ عرصہ نہیں گزرا سائنسدانوں نے بگ بینک کا نظریہ پیش کیا ۔ ابھی اس نظریہ پر مزید کام ہو رہا ہے۔ قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ نے آج سے چودہ سو سال پہلے بیان فرما دیا کہ یہ کائنات ایک شدید اور اچانک دھماکے کی پیداوار ہے۔
سورۃ فلق میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے ۔
“کہو میں پناہ مانگتا ہوں ، فلق کے رب کی ہر اس چیز کے شر سے جو اس نے پیدا کی”
سورۃ فلق کی یہ پہلی دو آیات ہیں ہم روزانہ کتنی بار تلاوت کرتے ہیں لیکن ہم ان کے معنی کی گہرائی میں جانے سے قاصر رہے ہیں۔
یہ آیات دراصل کائنات کی تشکیل کے متعلق ایک اہم پیغام دے رہی ہیں۔ یہ بات ذہن میں رہے کہ یہ پیغام چودہ صدی پہلے دیا گیا تھا۔ جس کو جدید سائنس نے اب بیان کرنا شروع کیا ہے۔ سورۃ فلق میں انسان اور دوسری مخلوق کی پیدائس سے متعلق بےحد اہم پیغامات دئیے گئے ہیں۔ لیکن سب سے زیادہ اہم اور دلچسپ پیغام وہ ہے جو فزکس اور حیاتیات (بیالو جی) کے علم کے نکتہ نظر سے پہلے ہی آیت میں بیان کر دیا گیا ہے۔ لفظ فلق ان آیات کی تشریح کے سلسلے میں بنیادی اہمیت کا حامل ہے ۔ اللہ تعالی کی اس صفت کا بطور خاص اس طرح اظہار ہے کہ وہ فلق کا رب ہے۔
لفظ فلق کئی معنوں کا حامل ہے ۔ مگر اس کا بنیادی مطلب اچانک پھاڑا جانا اور ایک شدید دھماکہ ہے۔ ایک اور معنی کے لحاظ سے اس کا مفہوم پھٹ جانا بھی ہے۔ یعنی یہ نظریہ ایک مخصوص قسم کے دھماکے کے نتیجہ کو ظاہر کرتا ہے ۔ “فلق” ایک شدید ترین دھماکے کی پیداوار ہے ۔ فلق ایک بے حد زیادہ اور غیر معمولی رفتار کے معنی بھی اپنے اندر رکھتا ہے۔
اس کے تشریح کے سلسلے میں مفسرین کی اکثریت نے عام فہم معنی ہی مراد لئے ہیں۔ بہت سے لوگوں نے اس کے تمثیلی معنی پسند کئے ہیں۔ (یعنی صبح ، دن کا آغاز۔ سورج کا نکلنا وغیرہ) ابن سینا نے اس کے معنی اس بچہ سے مراد لئے ہیں جو ماں کے پیٹ سے برآمد ہوتا ہے۔
لیکن حقیقت یہ ہے کہ لفظ فلق کے معنی ہیں وہ نتیجہ یا وجود جو ایک اچانک اور شدید دھماکے سے پیدا ہوا ہو۔ چنانچہ اس آیت مقدسہ کا ترجمہ یوں ہو سکتا ہے کہ
” کہو میں پناہ مانگتا ہوں (بگ بینگ والی تخلیق کے رب سے ) اس کی پیدا کردہ چیزوں کے شر سے ۔ ”
یہ سورۃ اللہ تعالی کی زبان میں یہ کہتے ہوئے معلوم ہو رہی ہے کہ ” میری ربوبیت میں ان تمام پیدا کردہ چیزوں سے پناہ حاسل کرو۔ جو میرے حکم پر ایک دھماکے کے ذریعے وجود میں آئیں ۔ میں ہی تمہارا مالک ہوں۔ اور میں ہی ان کہکشاؤں کا حاکم مطلق ہوں۔ جن کو ایک حیران کن دھماکے کے ذریعے جو ایک اکائی سے شروع ہوا، پیدا کر کے فضائے بسیط کی لا متناہی دوریوں تک پھیلا دیا گیا ۔ جو کوئی بھی مجھ میں پناہ لیتا ہے وہ تمام قسم کی برائیوں اور شر سے محفوظ ہو جاتا ہے ۔
اسلام ہی وہ دین ہے جو نسل انسانی کی بقا کا ذریعہ ہے ۔ جوں جوں ہم علم حاصل کرتے جائیں گے۔ ( قرآن اور سائنس) کا ہم دنیا میں ترقی کی منازل طے کرتے جائیں گے۔
ہم تباہی سے صرف اسی صورت محفوظ رہ سکتے ہیں کہ جب ہم اللہ تعالیٰ کے متعین کردہ قوانین اور اصولوں پر عمل کریں۔ ورنہ پچھلے چار پانچ سو سالوں سے ہم پر جو عذاب آیا ہوا ہے ۔ اس سے چھٹکارا ممکن نہیں۔
تحریر ۔ صلاح الدین احمد

دل کا دورہ

دل کا دورہ دل کی شریانوں کے تنگ ہو جانے سے ہوتا ہے ۔ ان تنگ رگوں سے ضرورت کے مطابق خون کی مقدار نہیں گزر سکتی۔ خون کی مقدار کی کمی کی وجہ سے”انجائنا”  کی تکلیف ہو جاتی ہے۔ جو دل میں درد پیدا کرتی ہے۔ جب ان شریانوں میں خون کا بہاؤ بالکل رک جائے تو دل کا متاثرہ حصہ بالکل ناکارہ ہو جاتا ہے۔ جسے ہارٹ اٹیک کہتے ہیں ۔ دل کا دورہ شروع ہوتے ہی سینے میں درد یا دباؤ محسوس ہوتا ہے ۔ جو گردن، کندھے یا بازو کی طرف پھیل جاتا ہے۔ اس کے علاوہ سانس کی تکلیف ، چکر ، متلی اور پسینہ آنے کی شکایات بھی ہو سکتی ہیں۔ دل کے دورہ سے دل زخمی ہو جاتا ہے۔ نماز کی صحیح ادائیگی دل کید ورے کو روکتی ہے۔ اور دورے کے امکانات بالکل ختم ہو جاتے ہیں۔ نماز کی وزرشیں دل کے دورہ سے بچاؤ کے لئے انتہائی مفید ہیں۔ اگر آپ نماز میں مندرجہ ذیل احادیث پر عمل کریں تو آپ دل کے دورہ سے مکمل نجات حاصل کر سکتے ہیں۔ نماز دل کے زخم مندمل کرنے اور نئی شریانیں پیدا کرنے میں انتہائی کارگر ہے ۔ شریانوں کی تنگی نوافل کی تعداد بڑھانے سے دور کی جا سکتی ہے۔ نماز بلڈ پریشر کو متناسب سطح پر رکھنے میں انہتائی مددگار ثابت ہوتی ہے۔ شکر (شوگر) اور غیر ضروری چربی کو نماز کا عمل ختم کر کے مکمل سکون راحت اور فرحت عطا کرتا ہے۔ لیکن یہ سب کچھ اسی صورت حاصل ہوتا ہے۔ جب آپ وقت کی پابندی کے ساتھ صحیح نماز کی ادائیگی کریں ۔ اس لئے احادیث کے مطابق نماز کا عمل سیکھنے کیلئے آج ہی بیت المعمور کے ممبر بنئے ۔ نماز کی صحیح ادائیگی سیکھئے ۔ اپنے اور اپنے اہل خان کو تباہی سے بچائیے۔


چئیرمین الصلاۃ ٹرسٹ

نماز کے فوائد

بسم اللہ الرحمن الرحیم

دور حاضر کا انسان بے عمل زندگی گزار ر ہا ہے۔ پیدل چلنے کے بجائے ہر جگہ سواری میں سفر کرتا ہے۔ کھڑا رہنے کے بجائے بیٹھا رہتا ہے۔ جسمانی سرگرمیوں میں خود حصہ لینے کے بجائے محض تماشائی بننا ہی کافی سمجھتا ہے۔
سائنسی ترقی کی بنا پر جلد ہی خود کار قوتیں انسان کا بہت سا کام کرنے لگیں گی جس سے انسان اور زیادہ بے عملی کا شکار ہو جائے گا۔ زمانہ قدیم کی کئی تہذیبیں جسمانی اور ذہنی انحطاط کی بنا پر تباہ ہوئیں۔ کیونکہ وہ بے عملی کا شکار ہو گئی تھیں۔ آج کا انسان پہلے سے کہیں زیادہ بے عملی کا شکار ہے۔
جس کی بنا پر جسمانی کمزوری، اعصابی تناؤ، ذہنی دباؤ مختلف قسم کی بیماریوں میں اضافہ اور دل کی بیماریاں بڑھتی جا رہی ہیں۔
فالج ۔ ذیابطیس ۔ معدہ کا ناسور۔ گردے کی بیماریاں۔ تپ دق اور دمہ کے امراض پٹھوں اور جوڑوں کے درد۔ فشار خون۔ ایڈز ۔ ذہنی اور اعصابی امراض تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔
دور جدید کا انسان گردو پیش کے حالات سے نفرت پریشانی اور خوف میں مبتلا ہے۔ جس سے اس کی ذہنی۔ جسمانی۔ اعصابی پریشانیاں بڑھتی جا رہی ہیں۔ اور انسانی ذہن تخریبی اور پریشان کن تفکرات اور دیگر دنیاوی مسائل کا شکار ہے۔
بیشتر ڈاکٹروں کی رائے ہے کہ جب تک جدید بودوباش میں ذہنی دباؤ نا آسودگی اور تناؤ کم نہیں ہوتا زندگی دو بھر رہے گی۔ لہذا ضروری ہے کہ متوازن اور موزوں منصوبہ بندی کے تحت ذہنی اور جسمانی تندرستی کا لائحہ عمل مرتب کیا جائے۔
کام کرنے اور پیدل چلنے سے جسم کے چھوٹے اور بڑے عضلات میں حرکت اور ان سے متعلقہ رد عمل کی بنا پر جسم انسانی میں طاقت۔ قوت برداشت۔ مہارت۔ اور تیزگامی کی صفات پیدا ہوتی ہیں۔
حرکت کے قوانین جسمانی اعضاء کے افعال اور ان کے رد عمل کے اثرات اور حرکات کا ماہرانہ عمل انسانوں کو معیاری قامت۔ حسین اعضاء اور جسم کے تیز تر افعال عطا کرتا ہے۔
بیماریوں سے بچاتا۔ ذہنی ۔ جسمانی اور اعصابی نظام میں ہم آہنگی پیدا کرتا ہے جس سے جسمانی و ذہنی سکون اور نیند کا عمل ترقی پاتا ہے اور خوشی و فرحت حاصل ہوتی ہے۔
اب یہ حقیقت سب جان چکے ہیں کہ جسم اور ذہن کی درست نشوونما سے صحت مند، طاقتور، خوبصورت، حاضر دماغ اور ذمہ دار انسان وجود میں آتے ہیں جب کہ انسانی نشوونما چار سمت میں ہوتی ہے۔
١۔ مناسب جسمانی ترقی سے عضلات اور اعصاب میں ہم آہنگی پیدا ہوتی ہے اور نامیاتی نظام ترقی کرتے ہیں۔
٢۔ نظام دوران خون، نظام تنفس، نظام انہضام، نظام اخراج فضلات انتہائی کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہیں۔
٣۔ مسلسل ایک جیسی حرکات سے جسم موزوں اور اعصاب و عضلات میں ربط بڑھتا ہے اور اس حرکاتی ترقی سے جسم بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرتا ہے جس سے جسمانی اور ذہنی تھکاوٹ دور ہوتی ہے۔
٤۔ جسم اور ذہن کی متوازن نشوو نما سے شخصیت کا ارتقاء ہوتا ہے بہتر میل جول، قیادت ، جرات، خود اعتمادی، تحفظ، خدمت، منصفانہ برتاؤ اور راست بازی جیسے اوصاف پیدا ہوتے ہیں۔ اختراع، خوش تدبیری، رہنمائی اور حاضر دماغی پیدا ہوتی ہے،
عمدہ قامت، خوبصورت جسم، چست حرکات، سریع رد عمل اور ذہنی سکون کا دارومدار بہت حد تک مضبوط اور لچک دار جسم پر ہوتا ہے۔ اگر عضلات اور پٹھے کمزور ہوں تو جسم متوازن اور سڈول ہونے کے بجائے بے ڈول اور بے ہنگم ہو جاتا ہے۔
عضلات پٹھے اور ہڈیاں پورے ارتقاء کو نہیں پہنچتے جس سے حسن رعنائی اور مضبوطی جو کہ مکمل ارتقاء کا خاصہ ہیں حاصل نہیں ہوتے۔
لہذا ضرورت اس امر کی ہے کہ انسانی صحت کے انحطاط کو روکا جائے۔ تاکہ ایک صحت مند خوبصورت، مضبوط اور مطمئن انسانی جسم اور ذہن تشکیل پا سکے جو کہ اکیسویں صدی کے چیلنج کا مقابلہ کر سکے ۔
مسلمانوں کے لئے اللہ تعالیٰ نے نبیؐ رحمت کے ذریعہ ایک بہت ہی عظیم تحفہ نماز کی شکل میں بھیجا جو کہ تمام اعلیٰ معیار کی عضلاتی، اعصابی ، ذہنی اور روحانی کسرتوں حرکات اور عملیات پر مشتمل ہے ۔ جو کہ انسان کی جسمانی، ذہنی اور روحانی ارتقاء اور نشوونما کے لئے موزوں اور نہایت ضروری ہے۔ لیکن افسوس کہ ہم اس اکثیر اعظم کی برکات و فوائد اور چاشنی سے یکسر نا بلد ہیں۔ ۔ کیونکہ ہم واجبات نماز میں چوری کرتے ہیں جس کی بنا پر برکات و فوائد کے بجائے جسمانی ذہنی اور روحانی نقصانات اٹھاتے ہیں۔ نماز کو پوری توجہ اور ادائیگی کے نبوی طریقہ سے اپنا کر ہم مندرجہ ذیل خصوصیات اور فوائد حاصل کر سکتے ہیں۔
بالخصوص دفتروں میں کام کرنے والے نوجوان ادیھڑ عمر مرد اور عورتیں جو گھنٹوں کرسی پر بیٹھ کر کام کرتے ہیں نماز کی درست ادائیگی کے ذریعے حملہ قلب، ذیابطیس، تپ دق، جوڑوں کے درد، معدے کے ناسور، ذہنی دباؤ، اعصابی تناؤ جسمانی کھنچاؤ، فکر، پریشانی، حتیٰ کے ایڈز اور خود کشی (مرکزی اعصابی نظام کے عارضے) جیسے امراض سے نجات حاصل کر کے مکمل سکون قلب اور اطمینان سے مذین صحت مند اور خوشگوار زندگی بسر کر سکتے ہیں۔
نماز کے فوائد اور برکات
١۔ نماز کی کسرتیں جسم کے بالائی اور نچلے حصوں میں توانائی بڑھاتی ہیں۔ اور عضلات اور پٹھوں کو مضبوط و توانا کرتی ہیں۔
٢۔ جسمانی حرکات میں ہم آہنگی پیدا کرتی ہیں اور جسم میں جازبیت اور لچک پیدا کرتی ہیں۔
٣۔ فطری صلاحیتیں اجاگر کرتی ہیں۔
٤۔ بغیر ورزشی آلات کے متوازن طور پر جسم کی ارتقاء کا عمل جاری رکھتی ہیں جس سے جسم میں حسن و توانائی کا اضافہ ہوتا ہے۔
٥۔ نماز زہنی دباؤ، اعصابی تناؤ، فکر اور پریشانی کو دور کرتی ہے۔ طمانیت خود اعتمادی اور تسکین قلب بہم پہنچاتی ہے۔
٦۔ اپنے آپ پر قابو پانے کی اہلیت پیدا ہوتی ہے۔
٧۔ اگر صلاحیت کم اور جسم کمزور ہو تو نماز سے بتدریج اس کمی کو دورکیا جا سکتا ہے۔
٨۔ قوت، سکت، برداشت، پھرتی اور توانائی بڑھاتی ہے۔ اور جسم میں نیا ولولہ پیدا کرتی ہے۔
٩۔ شرمیلا پن زیادہ ہو تو مسجد میں نماز سے خود اعتمادی حاصل ہوجاتی ہے۔
١٠۔ نماز انسان کو چوکس رکھنے اور توازن کو برقرار رکھنے میں انتہائی مددگار ثابت ہوتی ہے۔
١١۔ ہڈیوں کو نماز کا عمل لچکدار اور مضبوط رکھتا ہے۔ نماز حادثات کی شکل میں بہت سی چوٹوں سے محفوظ رکھتی ہے۔
١٢۔ نماز کا ماہرانہ عمل جسم کے دفاعی نظام کو بتدریج ترقی دیتا ہے اور کئی خطرناک بیماریوں اور ایڈز سے بچاتا ہے ۔ جس پر تمام صحت کا دارومدار ہے۔
١٣۔ نماز دوران خون کو بار بار کے سجدہ اور رکوع سے تیز کرتی ہے۔ خون کا دباؤ بڑھاتی ہے اور پھر کم کرتی ہے ۔ جس سے خون کی رگیں ، شریانیں اور وریدیں مضبوط ہو جاتی ہیں۔
١٤۔ دوران خون میں یکسانیت پیدا کرتی ہے جس سے دماغی ہیمرج، فالج، لقوہ جیسی مہلک بیماریوں سے نمازی محفوظ رہتا ہے۔
١٥۔ گھٹنوں کے بل جھکنے ، سیدھے بیٹھنے، سیدھے کھڑے ہونے اور کمر کو پوری طرح جھکانے اور سجدے کی حالت میں بازوؤں کو کہنی پر سے موڑنے اور باہر کی طرف پھیلانے سے ٹانگوں، بازؤں، ہاتھ پاؤں ، گردن ، کمر اور پیٹ کی نہ صرف ورزش ہوتی ہے بلکہ اعضاء رئیسہ یعنی دل، جگر ، پھیپھڑوں، معدہ ، انتڑیوں کی بھی ورزش ہوتی ہے اور ان کی کارکردگی کو بڑھاتی ہے۔ اس کے علاوہ دوران خون زیادہ ہونے کی وجہ سے آکسیجن کی آمد بڑھ جاتی ہے جو کہ صحت کے لئے انتہائی اہم ہے ۔
١٦۔ ذہنی دباؤ، اعصابی تناؤ، جسمانی کھنچاؤ اور مضحمل طبیعت کو مکمل طور پر بحال کرتی ہے۔ نہایت اعلیٰ قسم کی دافع درد ہے انجائنا کے درد کو مکمل دور کر دیتی ہے۔
١٧۔ دل کی بیماریوں سے مکمل طور پر محفوظ رکھتی ہے۔ اور جسمانی قوت اور زندگی کو بڑھاتی ہے۔ اگر خون کی نالیاں سکڑ گئی ہوں یا ان میں رکاوٹ پیدا ہو گئی ہو تو متوازن نالیاں بنانے میں زبردست مدد گار ثابت ہوتی ہے۔
١٨۔ اگر نماز درست طریقہ پر ادا کی جائے تو عارضہ قلب اور حملہ قلب سے مکمل طور پر بچاتی ہے۔ دل کے پٹھوں اور بافتوں کو وقتی ضرورتوں کے مطابق خون کی فراہمی کے عمل کو تقویت پہنچاتی ہے۔ کورونری رگوں کو سکڑنے سے روکتی ہے۔ رکاوٹوں کو دور کرتی ہے۔
١٩۔ دل کے بڑھنے کو روکتی ہے اور اگر دل بڑھ گیا ہو تو اسے اصل حالت میں لانے میں بہت مددگار ثابت ہوتی ہے، کیلسٹرول، چربی اور شکر کو ایندھن کے طور پر جلا دیتی ہے۔ کھانے کے بعد نماز کا عمل فالتو چربی اور شکر کو ختم کر دیتا ہے اور موٹاپے کو روکتا ہے۔ اعلیٰ قسم کی مصفا خون ہے۔
٢٠۔ نماز کی صحیح حرکات وقت کی پابندی کے ساتھ سکون قلب، طمانیت، جسمانی قوت، راحت، خود اعتمادی، ہم آہنگی، سبک رفتاری، توانائی ، سریع رد عمل اور جرأٔت پیدا کرتی ہے۔جسم اور چہرے کو خوبصورت بناتی ہے۔ اور انسانی شخصیت کو پر وقار بناتی ہے ۔
٢١۔ حاملہ خواتین کو بچے کی پیدائش کے عمل میں بہت مدد گار ثابت ہوتی ہے۔ نماز کا عمل انہیں سیزیرین برتھ سے بچاتا ہے ۔ چھاتی اور رحم کے کینسر سے نماز کا عمل محفوظ رکھتا ہے۔خواتین نوافل کی کثرت سے اپنے جسم کو مزید خوبصورت اور توانا بنا سکتی ہیں۔ نماز دافع امراض بھی ہے ۔ خواتین کی بیماریوں کا علاج اس میں موجود ہے ۔لہذا احادیث کے مطابق نماز کی ادائیگی بیماریوں کے خلاف مکمل مدافعت پیدا کرتی ہے۔ اور صحت مند اور توانا جسم کی ضمانت ہے ۔
٢٢۔ تنفس اور دوران خون کے نظام کو جوش اور تیزی سے ہمکنار کرتی ہے اور ذیق نفس کو روکتی ہے۔ جس سے پھیپھڑوں اور دل کی حرکات میں ہم آہنگی پیدا ہوتی ہے جس سے سانس کا عمل بہتر ہوتا ہے۔ اور مکمل تسکین حاصل ہوتی ہے۔
فارغ اوقات میں نوافل کی ادائیگی مزید قوت توانائی حسن اور رعنائی سکون و طمانیت کا باعث بنتی ہے۔ جس سے انسان میں اس کی بہترین صلاحیتیں اجاگر ہوتی ہیں۔
نماز مسجد میں ادا کرنے کے لئے پیدل چلنے کے عمل سے ٹانگوں اور بازؤں کے عضلات میں حرکت اور ان کے رد عمل کی بنا پر تیزگامی اور قوت میں اضافہ ہوتا ہے اور دل کے کام کرنے کی استعداد بڑھتی ہے۔
نماز میں قرات اورسانس روک کر آیات کی ادائیگی سے تنفس کے عمل میں بہتری پیدا ہوتی ہے۔ اور ذیق نفس کی بیماری سے نجات ملتی ہے۔ پھیپھڑوں میں ہوا روکنے سے سوراخ اور نالیاں صاف رہتی ہیں۔ اور نمازی دمہ، تپ دق اور پھیپھڑوں کے کینسر جیسے امراض سے محفوظ رہتا ہے۔
اگر رکوع اور سجدہ درست ادا کیا جائے تو ریڑھ کی ہڈیوں کے جوڑوں اور گردن کی ہڈیوں کی خرابیاں اور دماغی امراض سے مکمل نجات ملتی ہے۔
نماز میں اگر تسبیحات پوری ١٠ یا ١٣ ادا کی جائیں تو فشار خون میں کمی واقع ہوتی ہے۔ دماغی امراض سے نجات ملتی ہے ۔ قوت یاداشت تیز ہوتی ہے اور پرسکون اور گہری نیند آتی ہے۔ گردے، معدہ، دل ، پھیپھڑوں اور جگر کے عمل کی اصلاح ہوتی ہے۔ پٹھے ہڈیاں جوڑ مضبوط ہوتے ہیں۔ اور پورا جسم اپنی قدرتی ارتقائی منازل طے کرتا ہے۔ جس سے جسم کی ساخت بہتر اور بناوٹ عمدہ ہو جاتی ہے اور شخصیت میں حسن اور رعنائی تیز تر ہوتی چلی جاتی ہے۔
نماز میں بعض پٹھوں کو کسنے یعنی دباؤ میں رکھنے اور پھر ڈھیلا کرنے کے مسلسل عمل سے پٹھے اور جوڑ مضبوط ہوتے ہیں۔ ہاتھوں کی گرفت مضبوط ہوتی ہے۔ اور دوران خون میں وقتی تیزی اور پھر میانہ روی آتی ہے جس سے جسم میں قوت مدافعت بڑھتی ہے۔ اور اچانک حادثہ، دھماکہ، ڈرنے، خوف زدہ ہو جانے کی صورت میں دل قابو میں رہتا ہے۔ اور حملہ قلب سے انسان محفوظ رہتا ہے۔
مزید یہ کہ تمباکو نوشی، بسیار خوری، غیر معیاری خوراک، گھی، مکھن، گوشت ، چرب دار اور نشاستہ والی اشیا کا بے جا استعمال ، بے وقت سونا، کم سونا، نیند کا پورا نہ ہونا اور لمبے عرصے تک کاہلی کی زندگی گزارنا، بے عملی اور ہاتھوں سے کام کاج نہ کرنا۔ پیدل چلنے سے اجتناب ، جھوٹ ، دھوکا، فریب، ظلم، جنسی بے راہ روی، زنا، رشوت ستانی، ناکامی، مالی نقصانات وغیرہ کے رد عمل کی بنا پر غصہ، متشدد رویہ، پریشانی، ناخوشگواری، نا امیدی، بے عزتی، چھوٹا پن، شدید تنہائی کا احساس، مایوسی، افسوس، گناہ کا احساس، کشیدگی، گراوٹ کا احساس، ندامت، تھکاوٹ کااحساس، اعصابی تناؤ، جذباتی کھنچاؤ اور طبیعت کا مضمحل ہونا لازمی اور قدرتی عمل ہے۔ جس کے رد عمل کی بناء پر نظام تنفس، نظام انہضام، نظام دوران خون اور نظام اخراج فضلات شدید متاثر ہوتے ہیں۔ جس کا اثر انسان کے جسمانی، اعصابی اور روحانی عضلات پر پڑتا ہے۔ جس سے انسانی اعضائے رئیسہ بلخصوص دل ، دماغ، پھیپھڑے ، جگر ، معدہ اور اعصابی نظام کی کارکردگی میں رکاوٹ پیدا ہو جاتی ہے۔ جس سے انسانی جسم اور شخصیت میں ٹوٹ پھوٹ کا عمل جاری ہو جاتا ہے۔
نماز کا ماہرانہ عمل اور معیاری حرکات اس ٹوٹ پھوٹ کو روکتے ہیں۔ اور نہ صرف نقصانات کا ازالہ کرتے ہیں بلکہ اسے دوبارہ اپنے قدرتی راستہ پر گامزن کر دیتے ہیں۔ نوافل کی کثرت اسے مزید قوت بخشتی ہے۔ اور ایک مکمل طور پر صحت مند، حسین ، خوش مزاج اور مطمئن انسان وجود میں آتا ہے۔ جو آج کی دنیا کی انتہائی ضرورت ہے۔
یہ تمام خصائص اور برکات صرف اس صورت میں حاصل ہوتی ہیں اگر نماز پوری توجہ اور احادیث نبویۖ میں بتائے ہوئے طریقوں کے مطابق ادا کی جائے ورنہ طریقہ نبویۖ سے انحراف کی صورت میں ٦٠ سالہ نماز کی ادائیگی بھی شفا، برکات و فوائد کے حصول کے بجائے جسمانی، ذہنی اور روحانی نقصانات کا باعث بنتی ہے۔ جس سے ایک کمزور، بے ہنگم، ناہموار، حسن اور جاز بیت سے عاری جسمانی اور ذہنی طور پر پسماندہ منتشر اور مضمحل انسان وجود میں آتا ہے۔جیسا کہ آج مسلمانوں کا حال ہے۔یاد رکھیئے روایتی نماز وقت کا ضیاع ہے ۔ اور تباہی اور بربادی کے سوا نمازی کو کچھ نہیں ملتا ۔ اور یہ تکذیب دین کے زمرے میں آتی ہے ۔ اللہ ہمیں ایسی نماز سے بچائے ۔
نماز سے انتہائی فوائد اور برکات حاصل کر کے ہم ایک خوشگوار صحت مند، طویل ، معیاری اور اعلیٰ زندگی گزارنے کے اہل بن سکتے ہیں۔
آئیے ہم آپ کو بتائیں کہ آپ یہ اعلیٰ معیار کیوں کر حاصل کر سکتے ہیں۔ ان تمام نبوی طریقوں سے استفادہ کرنے کے لئے احادیث نبوی کے مطابق نماز کی ادائیگی کا عمل سیکھئے اور نماز کی برکات ثمرات اور فوائد حاصل کیجئے۔جان لیں ، روایتی نماز سے آپ کو کچھ حاصل نہیں ہوگا۔صحیح نماز میں اللہ تعالی نے شفا رکھی ہے۔ جس سے آپ ابھی تلک محروم ہیں۔نماز دل کی تمام بیماریوں سے نجات کا ذریعہ ہے ۔ ذیابطیس (شوگر)، فشار خون ( ہائپر ٹنشن )، اور ذہنی بیماریوں سے مکمل طور پر صحت یاب کرتی ہے ۔
اسلئے اس مؤثر ترین ہتھیار کا استعمال سیکھنے کے لئے بیت المعمور کے ممبر بنیئے۔ایک اعلیٰ معیار کی بیماریوں سے پاک زندگی گزارئیے ۔
عارضہ قلب اور حملہ قلب سے بچنے کا طریقہ سیکھنے کے لئے تربیتی پروگرام کے لئے مندرجہ ذیل پتہ پر رابطہ کیجئے ۔ کوئی فیس نہیں تربیت بلا معاوضہ ہے ۔باقاعدہ استاد کا انتظام ہے جو آپ کو صحیح نماز سکھانے کے لئے ہما وقت موجود رہتے ہیں۔

سردار آفتاب احمد
چئیرمین اصلوٰةٹرسٹ

بیسمنٹ مسجد کمال دین چوڑ ہڑپال پشاور روڈ راول پنڈی کینٹ